Columns of Ansar Abbasi 122

ہم بربادہو جائیں گے!

دو روز قبل پاکستان کے ایک بڑے انگریزی اخبار میں ایک خبر شائع ہوئی جو ہمارے پاکستانی معاشرہ کے لئے انتہائی سنگین نتائج کی حامل ہے لیکن وہ خبر Ignore ہو گئی۔ نہ کسی ٹی وی چینل نے اُسے اُٹھایا، نہ ہی ٹاک شوز کا وہ موضوع بنی۔ انگریزی اخبارات پڑھنے والے ویسے ہی کم ہیں، اِس لئے اُس اخبار کے محدود قارئین کی نظر سے ہی وہ خبر گزری اور ہو سکتا ہے کہ بہت سوں نے اُسے وہ اہمیت بھی نہ دی ہو اور وہ خطرہ اور سنگینی نوٹ ہی نہ کی ہو جس کا اُس خبر میں ذکر تھا۔ اکثر سیاستدان تو اخبارات کو صرف سیاسی خبروں کی حد تک ہی پڑھتے ہیں اور اِس کے لئے بھی وہ اردو کے اخبارات کا ہی زیادہ مطالعہ کرتے ہیں۔ ویسے بھی جس خبر کا میں ذکر رہا ہوں، وہ ہمارے سیاستدانوں کی ترجیحات میں شامل نہیں۔

جس خبر کا میں ذکر کر رہا ہوں اُس کا تعلق پاکستان کے خاندانی نظام سے ہے جو اِس قدر تیزی سے تباہ حالی کا شکار ہے کہ صرف سندھ میں سال 2019کے مقابلہ میں سال 2020کے دوران شادی شدہ عورتوں کی طرف سے خلع لینے (یعنی اپنے شوہر سے عدالت کے ذریعے طلاق لے کر شادی ختم کرنے) کے مقدمات میں سات سو فیصد سے زیادہ (722فیصد) اضافہ ہوا۔ خبر کے مطابق سال 2019کے دوران صوبہ سندھ میں مجموعی طور پر خلع کے632کیس عدالتوں میں دائر کئے گئے جبکہ ایسی خواتین جو اپنی شادی ختم کرنے کی خواہاں ہیں اور اُس کے لئے عدالت کا دروازہ کھٹکھٹاتی ہیں، اُن کی مجموعی تعداد سال 2020میں اِس صوبہ میں پانچ ہزار سے بھی اوپر 5,198تک پہنچ گئی۔ خبر میں ایک متعلقہ خاتون وکیل کے حوالے سے کہا گیا کہ زیادہ تر خلع کے مقدمات دائر کرنے کی دو وجوہات ہیں۔ ایک طرف شوہر بیویوں کے متعلق اپنی ذمہ داری پوری نہیں کرتے تو دوسری طرف میڈیا میں فلموں اور ڈراموں میں جو کچھ پیش کیا جا رہا ہے، اُس کا حقیقی زندگی سے اگرچہ کوئی تعلق نہیں ہوتا لیکن اُن ڈراموں اور فلموں کو دیکھ کر حقیقی زندگی کو تسلیم کرنا ایسی خواتین کے لئے مشکل ہو جاتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: -   اللہ ہی رحم کرے

یہ وہ خبر ہے جو پاکستان کے معاشرتی اور خاندانی نظام کو لاحق اُس بہت بڑے خطرے کی طرف ہماری توجہ دلا رہی ہے جس کے لئے میرا جسم میری مرضی، عورت کی آزادی، حقوقِ نسواں اور برابری کے نام پر پاکستان میں بہت کام ہو رہا ہے جس میں این جی اوز کے ساتھ ساتھ پاکستانی میڈیا اپنی فلموں، ڈراموں حتیٰ کہ خبروں اور اشتہاروں کے ذریعے بہت بڑھ چڑھ کر، جیسا کہ وزیراعظم عمران خان بھی کہتے ہیں، وہ کچھ دکھا رہا ہے جس کا مقصد پاکستان کے خاندانی نظام کی تباہی اور فحاشی و عریانی کو پھیلانا ہے۔ پاکستانی ڈراموں اور فلموں کے موضوعات اور دکھایا جانے والا مواد اتنا گھٹیا ہو چکا ہے کہ کسی تعمیری موضوع یا معاشرہ کی کردار سازی کی بجائے ناجائز تعلقات، طلاق، قریبی اور حرمت والے رشتوں کی پامالی کی کہانیاں دکھائی جاتی ہیں۔ اگر کوئی کسر باقی رہ جاتی ہے تو وہ این جی اوز اور میڈیا میرا جسم میری مرضی، عورت کی آزادی، حقوقِ نسواں وغیرہ جیسے نعروں کے ذریعے پوری کرکے اس کوشش میں ہیں کہ کوئی گھر نہ بسے۔ ’’میرا جسم میری مرضی والے‘‘ تو حالیہ برسوں میں اپنے مظاہروں میں طلاق کو بہت خوبصورت بنا کر پیش کرتے رہے ہیں۔ این جی اوز اور میڈیا پر مسلط ایک سوچ یہ بھی ہے کہ عورت جو جی چاہے کر لے،اُس کے باپ، شوہر وغیرہ کو کوئی حق نہیں کہ اُسے روکے۔ یہاں تو کرکٹر شاہد آفریدی کو میڈیا گردی کا سامنا کرنا پڑا جب اُس نے یہ کہا کہ وہ اپنی بیٹیوں کو باہر کرکٹ کھیلنے کی اجازت نہیں دے سکتا۔ یہاں تو کہا جاتا ہے کہ شوہر کو کہو ’’اپنا کھانا خود گرم کرو‘‘۔

یہ بھی پڑھیں: -   یہ میرے ساتھ نہیں ہو سکتا

گویا ہمارے خاندانی نظام کو مغرب زدہ کرکے تباہ کرنے والے کامیاب ہو رہے ہیں اور ہم ہیں کہ ہاتھ پہ ہاتھ دھرے بیٹھے ہیں۔ وزیراعظم عمران خان نے گزشتہ کچھ عرصہ کے دوران بار بار خاندانی نظام کو بچانے کی بات کی اور مثالیں دیں کہ کیسے ہالی ووڈ اور بالی ووڈ فحاشی و عریانی پھیلا کر مغرب اور بھارت میں خاندانی نظام کی تباہی کا سبب بنے۔ وزیراعظم نے کہا کہ یہی کچھ پاکستان میں بھی ہوگا اگر ہم نے پاکستانی میڈیا، ڈرامہ اور فلم انڈسٹری کو وہی کچھ کرنے دیا جو مغرب اور بھارت میں ہو رہا ہے۔ اگرچہ وزیراعظم نے اسلامی تاریخ سے متعلق ارطغرل غازی اور دوسرے بہترین ترک ڈرامے پاکستان میں دکھانے کے احکامات جاری کئے جو بہت مقبول ہوئے لیکن اُن کی حکومت کی طرف سے پاکستانی میڈیا، فلموں، ڈراموں کے ذریعے پھیلائی جانے والی فحاشی اور گھٹیا موضوعات کو روکنے کے لئے کوئی واضع پالیسی سامنے نہیں آئی جس کی وجہ سے غیراخلاقی، فحش اور گھٹیا مواد اب بھی ماضی کی طرح بلا روک ٹوک دکھایا جا رہا ہے۔

ایسا نہیں کہ پاکستان میں خواتین کے ساتھ ناروا سلوک نہیں ہوتا اور شوہر کوئی بڑے اچھے ہوتے ہیں۔ یقیناً یہاں ایسے مردوں کی کمی نہیں جو خواتین اور اپنی بیویوں کے ساتھ بہت بُرے انداز میں پیش آتے ہیں، اُنہیں مارتے ہیں، اُن کے حقوق پورے نہیں کرتے۔ اُس کے لئے میں بار بار جو کہتا ہوں کہ ہمیں اپنی قوم کی تربیت اور کردار سازی کی طرف توجہ دینا ہوگی جس کے لئے ریاست کچھ کر رہی ہے نہ ہی پارلیمنٹاور نہ ہی سیاستدانوں اور میڈیا کو اِس موضوع میںکوئی دلچسپی ہے۔ اسلامی تعلیمات کے مطابق بہترین شخص وہ ہے جو اپنی بیوی کے ساتھ اچھا سلوک روا رکھے۔ اسلام میں میاں بیوی کو ایک دوسرے کا لباس گردانا گیا ہے۔ ایک دوسرے کے متعلق دونوں کے حقوق و فرائض وضع کر دیے گئے لیکن اِس تعلیم اور اس کی بنیاد پر معاشرے کی تربیت کا نہ کوئی نظام ہے اور نہ ہی کوئی اِس نظام کے نفاذ کے لئے سنجیدہ ہے۔ نتیجتاً پاکستانی معاشرے کو میرا جسم میری مرضی، عورت کی آزادی، حقوقِ نسواں اور برابری کے نعرے لگانے والوں کے ہاتھوں تیزی سے ایک ایسی تنزلی کا سامنا ہے، جسے اگر نہ روکا گیا تو ہم برباد ہو جائیں گے۔

یہ بھی پڑھیں: -   بیچارا سچ
 نوٹ: پاک اردو رائٹر کا کالم نگار سے متفق ہونا ضروری نہیں۔ کالم نگا ر کے مزید کالمز پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں یا کالم نگار کے نام کے ساتھ ایس ایم ایس اور واٹس ایپ رائے دیں 00923004647998
Columns of Ansar Abbasi
انصار عباسی

کس سے منصفی چاہیں

کالم نگار کے مزید کالمز پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

کالم نگار کے نام کے ساتھ ایس ایم ایس اور واٹس ایپ رائے دیں 00923004647998

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں