columns of Javed Chaudhary 26

چوہدری صاحبان کی بڑی سیاسی غلطی

میاں شہباز شریف 13 فروری کو لاہور میں چوہدری صاحبان کے گھر گئے‘یہ ملاقات سیاسی تجزیہ کاروں کے لیے سرپرائز تھی‘پورا ملک جانتا تھا چوہدری صاحبان شریف فیملی سے ناراض ہیں۔

میاں نواز شریف نے 1996 میں وعدہ کیا تھا ہم اگر الیکشن جیت گئے تو چوہدری پرویز الٰہی وزیراعلیٰ پنجاب ہوں گے لیکن الیکشن جیتنے کے بعد شہباز شریف کو وزیراعلیٰ بنا دیاگیا‘ چوہدری صاحبان کا دل ٹوٹ گیا اور اس کا بدلہ انھوں نے جنرل پرویز مشرف کے دور میں لیا‘ ق لیگ بنائی۔

مشرف کا ساتھ دیا اور پانچ سال ڈٹ کر پنجاب پر حکمرانی کی‘ دونوں خاندانوں کے درمیان شدید اختلافات اور دوریاں تھیں لیکن یہ اس کے باوجود ایک دوسرے کا احترام بھی کرتے تھے‘ چوہدری ظہور الٰہی کا خاندان وضع دار اور رکھ رکھاؤ کا مالک ہے بالخصوص تمام سیاست دان چوہدری شجاعت حسین کی دل سے عزت کرتے ہیں‘ یہ انتہائی مثبت‘ درددل سے مالا مال اور عاجز انسان ہیں لہٰذا کوئی شخص ان پر انگلی نہیں اٹھاتا لیکن اس کے باوجود چوہدری 2008 کے بعد جزوی اور 2013کے بعد سیاسی لحاظ سے مکمل غیر متعلقہ ہو گئے۔

پارٹی چھوٹی سے چھوٹی ہوتی چلی گئی مگر چوہدریوں کا سیاسی قد برقرار رہا‘ یہ سیاسی سمجھ بوجھ اور برے سے برے حالات میں بھی اپنا راستہ نکالنے والے لوگ ہیں چناں چہ 2018میں ان کا کم بیک ہوگیا‘ گو وفاق میں ان کی صرف چاراور پنجاب میں سات سیٹیں تھیں لیکن یہ کم تعداد کے باوجود وہ کیل تھے جس کے بغیر دو تختے آپس میں جڑ نہیں سکتے چناں چہ یہ پنجاب میں اسپیکر شپ اوردو وزارتیں اور وفاق میں دو وزارتیں لینے میں کام یاب ہو گئے تاہم عمران خان ان سے خوش نہیں تھے‘ کیوں؟ چار بڑی وجوہات تھیں‘ پہلی وجہ چوہدریوں کا سیاسی قد کاٹھ ہے۔

چوہدری تگڑے اور جوڑ توڑ کے ماہر ہیں‘ عمران خان ان سے خائف تھے‘ دوسری وجہ عمران خان ان کو کرپٹ سمجھتے تھے اور تیسری وجہ مونس الٰہی تھے‘ چوہدری برادران مونس الٰہی کو وفاقی وزیر بنوانا چاہتے تھے جب کہ عمران خان ان کی شکل بھی نہیں دیکھنا چاہتے تھے لہٰذا دونوں کے درمیان پونے چار سال لو ہیٹ ریلیشن شپ رہا‘ چوہدریوں کو جہانگیر ترین اور اسحاق خاکوانی لے کر آئے تھے‘ یہ حالات کو کنٹرول کر لیتے تھے لیکن جب یہ بھی نہ رہے تو ناراضگیاں بڑھ گئیں اور چوتھی وجہ طارق بشیر چیمہ تھے۔

یہ ق لیگ کی طرف سے ہاؤسنگ اینڈ ورکس کے وفاقی وزیر تھے‘ یہ دبنگ اور نڈر انسان ہیں‘ یہ کابینہ میں ہمیشہ بولتے تھے اور وزیراعظم کو یہ اچھا نہیں لگتا تھا‘ چوہدری صاحبان نے متعدد مرتبہ وزیراعظم سے شکوہ کیا‘ کئی بار حکومت سے نکلنے کا فیصلہ بھی کیا لیکن راستے میں مقام خاص آ جاتا تھا اور چوہدری بے بس ہو جاتے تھے۔

یہ بھی پڑھیں: -   اسد عمر سے درخواست

یہ معاملات شاید جوں کے توں چلتے رہتے لیکن پھر ایک اہم تقرری کا ایشو آیا‘ معاملات بگڑے اور ترازو آہستہ آہستہ نیوٹرل ہو گیا‘ نیا سال شروع ہوا تو ایک سویلین شخصیت لندن میں میاں نواز شریف سے ملی‘ ون آن ون ملاقات ہوئی اور میاں نواز شریف نے مولانا فضل الرحمن کو گرین سگنل دے دیا‘ مولانا ،آصف علی زرداری کو بھی واپس لے آئے یوں اپوزیشن نے تبدیلی کی شطرنج بچھا دی‘ اپوزیشن کے ہاتھ میں تین مہرے تھے‘ پی ٹی آئی کے 25 ارکان اپوزیشن سے رابطے میں تھے‘ 14 لوگ ن لیگ کے ٹکٹوں کے متمنی تھے‘ 8 پیپلز پارٹی کے ہاتھ میں تھے اور تین مولانا فضل الرحمن سے ٹکٹ لینا چاہتے تھے۔

یہ لوگ مزید لوگ بھی لا سکتے تھے لیکن اپوزیشن کے پاس مزید ٹکٹ دستیاب نہیں تھے‘ دوسرا مہرہ اتحادی تھے اگر اتحادی حکومت کا ساتھ چھوڑ دیتے تو حکومت دو دن میں گر جاتی‘ اپوزیشن نے ان پر بھی کام شروع کر دیا اور تیسرا مہرہ اتحادی پارٹیوں کی تقسیم تھی‘ اپوزیشن نے فیصلہ کیا اگر اتحادی نہیں مانتے تو پھر ان کے ارکان توڑ لیے جائیں‘ ق لیگ کے اندر بھی دراڑ ڈال دی جائے اور ایم کیو ایم‘ باپ پارٹی اور جی ڈی اے کے ارکان کو ساتھ ملا لیا جائے اور اس حکمت عملی کے تحت میاں شہباز شریف 13 فروری کو چوہدری صاحبان کے گھر پہنچ گئے۔

یہ ملاقات آصف علی زرداری کی سفارت کاری کا نتیجہ تھی‘ زرداری صاحب چوہدری پرویز الٰہی کو وزیراعلیٰ بنوانا چاہتے تھے‘ میاں نواز شریف نہیں مان رہے تھے لیکن مولانا اور زرداری صاحب نے انھیں بڑی مشکل سے راضی کر لیا‘ بہرحال ملاقات ہوئی اور شہباز شریف نے انھیں کھانے کی دعوت دے دی لیکن اگلے چند دنوں میں دو نئی ڈویلپمنٹس ہو گئیں‘ مونس الٰہی نے 14فروری کو وزیراعظم کے سامنے اعلان کر دیا ’’ ہم سیاسی لوگ ہیں اور سیاسی لوگ تعلقات بناتے اور نبھاتے ہیں‘ کوئی گھر آئے تو اسے ویلکم کرتے ہیں‘ ہمارا آپ سے تعلق نبھانے کے لیے بنا ہے۔

آپ پی ٹی آئی والوں کو تگڑے طریقے سے کہہ دیں گھبرانا نہیں ہے‘‘ یہ اعلان اپوزیشن کے لیے سرپرائز تھا لہٰذا یہ لوگ ناراض ہو گئے اور پلان بی اور سی کی طرف بڑھنے لگے‘ چوہدری پرویز الٰہی نے دوسری غلطی شہباز شریف کے ڈنر میں نہ جا کر کی اور یوں معاملات ڈیڈ لاک کا شکار ہو گئے‘ چوہدری شجاعت کو ان دونوں غلطیوں کا احساس ہو گیا چناں چہ انھوں نے معاملات سنبھالنے کی کوشش کی‘ یہ 8 مارچ کو مولانا اور 9 مارچ کو آصف علی زرداری سے ملے۔

یہ بھی پڑھیں: -   اپوزیشن کے تین سال

زرداری صاحب نے جواب دیا ’’آپ نے پہلی ٹرین مس کر دی اگر دوسری میں گنجائش ہوئی تو آپ کو ایڈجسٹ کر لیا جائے گا‘‘ اپوزیشن نے اس دوران پی ٹی آئی کے 12 ارکان سندھ ہاؤس میں میڈیا کے سامنے پیش کر دیے‘ چوہدری مزید گھبرا گئے لہٰذا پرویز الٰہی نے اوپر تلے دو تین انٹرویوز دیے اور اپنا وزن اپوزیشن کے پلڑے میں ڈال دیا‘ چوہدری دوبارہ ڈائیلاگ میں آ گئے‘ اس دوران حکومت نے منحرف ارکان سے رابطے شروع کر دیے جس سے اپوزیشن گھبرا گئی اور اس نے اتحادیوں سے رابطے تیز کر دیے‘ باپ پارٹی مان گئی۔

ایم کیو ایم کے تمام مطالبات مان لیے گئے اور میاں نواز شریف نے چوہدری پرویز الٰہی کو وزیراعلیٰ بنانے کا فیصلہ بھی کر لیا چناں چہ 27 مارچ کی شام ن لیگ کا وفد چوہدری صاحبان کے گھر گیا‘ مبارک باد پیش کی‘ کھانا کھایا اور آخر میں دعا بھی ہو گئی‘ چوہدری صاحب نے ن لیگ کو مشورہ دیا یہ خبر جوں ہی عمران خان تک پہنچے گی یہ پنجاب اسمبلی تڑوا دیں گے لہٰذا آپ کل عثمان بزدار کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک جمع کرا دیں‘ ن لیگ مان گئی‘ چوہدری پرویز الٰہی رات بارہ بجے آصف علی زرداری کے گھر گئے۔

شکریہ ادا کیا اور ان سے گلے مل کر واپس آ گئے لیکن اگلی صبح حکومت کا وفد چوہدریوں کے گھر آیا اور وزیراعظم کی طرف سے وزارت اعلیٰ کی پیش کر دی‘ مونس الٰہی نے یہ آفر قبول کر لی‘ ان کا خیال تھا اپوزیشن کی چیف منسٹری دو تین ماہ سے لمبی نہیں ہو گی جب کہ عمران خان انھیں ڈیڑھ سال پنجاب کا اقتدار دیں گے‘ ہمیں لمبا سودا کرنا چاہیے‘ اس دوران طارق بشیر چیمہ کی شاہ محمود قریشی کے ساتھ ہارڈ ٹاک شروع ہو گئی۔

چیمہ صاحب نے کہا‘ میں عمران خان کو کسی صورت ووٹ نہیں دوں گا‘ آپ بے شک وزیراعظم کو بتا دیں‘ چوہدری شجاعت حسین نے طارق بشیر چیمہ کی حمایت کی‘چیمہ صاحب کا کہنا تھا چوہدری پرویز الٰہی وزیراعظم کے ساتھ مل کر بڑی سیاسی غلطی کریں گے‘ یہ بااعتماد شخص نہیں ہے‘ چوہدری صاحب مونس الٰہی کے ساتھ وزیراعظم کے پاس چلے گئے اور یوں چوہدری پرویز الٰہی کی ایک غلطی نے ایم کیو ایم کی پوزیشن بھی مضبوط کر دی اور چوہدری ظہور الٰہی کا گھرانہ بھی توڑ دیا۔

یہ بھی پڑھیں: -   امریکہ کا چکر: کچھ حال یونیورسٹی کا

ہم اگر آج ٹھنڈے دل سے سوچیں تو پچھلے ایک ہفتے کے دوران چوہدری پرویز الٰہی نے سب سے زیادہ سیاسی نقصان اٹھایا‘ یہ وزیراعلیٰ بنتے بنتے رہ گئے‘ یہ اپوزیشن کے ساتھ ہوتے تو یہ اپریل کے دوسرے ہفتے میں پنجاب کے وزیراعلیٰ بھی بن جاتے اورانھیں اگلے الیکشن میں مزید سیٹیں بھی مل جاتیں لیکن بہرحال گئے وقت اور نکلے ہوئے تیر کبھی واپس نہیں آتے‘ پرویز الٰہی کو ان کے صاحب زادے نے مروا دیا‘دوسری طرف اس خبر سے سب سے زیادہ ن لیگ کو خوشی ہوئی‘ ان کے ارکان نے ایک دوسرے کو مبارک باد بھی دی اور یہ ایک دوسرے سے گلے بھی ملتے رہے جب کہ چوہدری شجاعت حسین کو ان کے ساتھیوں نے زندگی میں کبھی اتنا پریشان اور اداس نہیں دیکھا تھا جتنا یہ 28 مارچ کی شام تھے۔

ق لیگ میں سے صرف طارق بشیر چیمہ کو سیاسی فائدہ ہوا‘ یہ ڈٹ گئے اور ڈنکے کی چوٹ پر اپوزیشن کا ساتھ دینے کا اعلان کیا لہٰذا ان کے سیاسی قد میں اضافہ ہو گیا‘ اپوزیشن کا خیال تھا چوہدری شجاعت شام تک پرویز الٰہی سے الگ ہونے کا اعلان کر دیں گے لیکن چوہدری صاحب کی وضع داری نے انھیں اپنے بھائی کے خلاف زبان کھولنے کی اجازت نہ دی اور یوں چوہدری ظہور الٰہی کا خاندان ٹوٹ بھی گیا اور ایک سیاسی غلطی نے چوہدریوں کو بے وقار بھی کر دیا‘ آج لوگ کہہ رہے ہیں یہ اتنا بھی اندازہ نہیں کر سکے اداروں میں اگر عمران خان کے لیے تھوڑی بہت ہمدردی تھی بھی تو وہ 27 مارچ کی شام غیرملکی خط لہرانے کے بعد مکمل طور پر ختم ہو گئی تھی‘ ادارے اس خط کو ملک کے خلاف عمران خان کی سازش سمجھ رہے ہیں۔

چوہدری پرویز الٰہی یہ اندازہ بھی نہ کر سکے یہ اس کشتی میں چھلانگ لگا رہے ہیں جس کا ساتھ چپو بھی چھوڑ چکے ہیں اور یہ اتنا بھی نہیں سمجھ سکے جس حکومت کا ساتھ اس کا اسپیکر تک چھوڑ گیا ہے، میں اس کے لیے اذان سے تین منٹ پہلے روزہ توڑ رہا ہوں‘ کیا خوف ناک پولیٹیکل ٹریجڈی ہے۔

columns of Javed Chaudhary
جاوید چودھری

کالم نگار کے مزید کالمز پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں