Columns of Ansar Abbasi 69

ڈرپوک حکمران، بے حس والدین

صوبہ پنجاب کے ہائیر ایجوکیشن ڈپارٹمنٹ کے حوالہ سے گزشتہ ہفتے ایک خبر آئی جس میں کچھ ایسی بات کی گئی تھی کہ صوبے میں پرائیویٹ کالجزاور یونیورسٹیوں کو بی ایس کے چار سالہ پروگرامز کے لیے این او سی جاری کرنے کے لیے ایک شق یہ بھی موجود ہے کہ لڑکیوں اور لڑکوں کے لیے الگ الگ یعنی علیحدہ کلاس رومز یا بلاکس کا انتظام کیا جائے۔

اس بارے میں تفصیلات یا ہائیر ایجوکیشن ڈپارٹمنٹ کی طرف سے کوئی explanation تو سامنے نہ آئی لیکن چند ایک ٹی وی چینلز کی طرف سے یہ سوال اُٹھایا جانے لگا کہ کیا پنجاب حکومت مخلوط تعلیمی نظام پر پابندی لگانے جا رہی ہے؟ کتنا اچھا ہو کہ ایسا ہی ہو لیکن میڈیا میں ایسی خبروں کو سکینڈلائز کیا جاتا ہے اور اس طرح سے پیش کیا جاتا ہے جیسے کوئی جرم کیا جا رہا ہو۔

ہمارا دین جو مرضی کہتا ہو، ہمارے آئین میں جو چاہے لکھا ہو، مخلوط تعلیمی نظام اور اس کے نقصانات کتنے ہی سنگین کیوں نہ ہوں، چاہے لاکھوں بچیاں اس لیے اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے سے محروم رہ رہی ہوں کہ بہت سے والدین مخلوط تعلیمی نظام میں اپنی بچیوں کو پڑھانے کے لیے تیار نہیں، کچھ بھی ہو پاکستانی میڈیا کا ایک چھوٹا لیکن طاقت ور طبقہ ہم پر ،ہمارے معاشرے پر، ہمارے گھروں میں اُس مغربی کلچر کو زبردستی ٹھونسنے کی کوشش میں ہے جس کانتیجہ بے حیائی اور بے راہ روی ہے، جو مرد وعورت میں دوستی، بغیر شادی ایک دوسرے کے ساتھ تعلق اور ساتھ رہنے تک کو بُرا نہیں جانتا بلکہ اسے ترقی اور عورت کی آزادی سے تشبیہ دیتا ہے۔ تعلیمی اداروں کا مقصد بچوں بچیوں کی تعلیم اور اپنی دینی اور معاشرتی اقدار کے مطابق تربیت ہی اولین ترجیح ہونی چاہیے لیکن یہاں تو تعلیمی اداروں میں ایک ایسے کلچر کو پروموٹ کیا جا رہا ہے، جہاں پڑھائی لکھائی اور تربیت کے برعکس فیشن، ڈانس، کھلے عام لڑکے لڑکیوں میں دوستیاں اور یہاں تک کہ سب کے سامنے ایک دوسرے سےبغلگیرہونا اور فلمی انداز میں پروپوز کرنا سب کچھ نارمل ہوتا جا رہا ہے۔پڑھائی پیچھے رہ گئی، تربیت کی کسی کو فکر ہی نہیں اور کردار سازی کی بجائے اخلاقی گراوٹ کی طرف ہمارا سفر جاری ہے۔ یونیورسٹیوں، کالجوں اور انگلش میڈیم سکولوں تک میں نشہ عام کیا، خطرناک حد تک پھیلتا جا رہا ہے جس کا شکار لڑکے اور لڑکیاں دونوں ہو رہے ہیں۔ والدین اور عام لوگوں کو تو اندازہ ہی نہیں کہ تعلیمی اداروں کا ماحول کس قدر خراب ہوتا جا رہا ہے اور والدین کی یہی بے خبری اُن کی اولاد کے بگاڑ کی وجہ بن رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: -   بھٹو سے پی پی پی کی غداری

حکومتیں، حکمران، سیاستدان اور دوسرے اہم ادارے ان معاملات میں میڈیا سے اتنا خائف ہیں کہ اچھے سے اچھے کام کا بھی دفاع نہیں کرتے۔ یعنی اگر کوئی حکومت، کوئی سکول، کالج یا یونیورسٹی انتظامیہ یہ حکم جاری کر دے کہ کیمپس میں لڑکیوں اور لڑکوں کو مہذب لباس پہننا ہوگا اور اگر اس میں، بچیوں کو شلوار قمیض اور سر ڈھانپنے کا کہہ دیا جائے تو اس پر میڈیا کا مخصوص طبقہ برہم ہو جاتا ہے، ایک مہم چلا دی جاتی ہے اور ایسا تاثر دیا جاتا ہے جیسے کوئی بہت بڑا ظلم کر دیا گیا ہو، خواتین کے حقوق اور آزادی نسواں کے کسی نام نہاد چیمپیئن کوبلا کر متعلقہ حکومت یا تعلیمی ادارےکی انتظامیہ وغیرہ کو لعن طعن کیا جاتا ہے۔ اور ایسے میں اچھے کام کا حکم دینے والے بھاگنے پر مجبور ہو جاتے ہیں جبکہ نہ اسلام کا نقطہ نظر پیش کیا جاتا ہے، نہ ہی آئین و قانون اور ہماری معاشرتی اقد ار کی بات کی جاتی ہے۔ پاکستانی طلباء کے لیے گویا ایک ہی چوائس، اُن کے سامنے، رکھی جا رہی ہے کہ وہ تعلیمی اداروں میں اُس ماحول کو اپنائیں جس کا تعلق مغربی کلچر سے تو ضرور ہے لیکن جو ہماری اپنی دینی اور معاشرتی اقدار کے خلاف ہے۔ یعنی اگر سمجھیں تو اہمیت تعلیم کی نہیں بلکہ اُس کلچر کے فروغ کی ہے جو ہماری تباہی کا ذریعہ تو بن سکتا ہے لیکن کسی بھی طور ہمارے لیے فائدہ مند نہیں ہو سکتا۔

اس بات پر سوچا تک نہیں جا رہا کہ کہیں مخلوط تعلیمی نظام اور تعلیمی اداروں میں مغربی کلچر کے فروغ سے ہزاروں لاکھوں بچیاں اعلیٰ تعلیم سے محروم تو نہیں ہو رہیں۔ مقصد تعلیم اور تربیت ہونا چاہیے لیکن یہاں تو میڈیا کے ذریعے معاشرےکے ساتھ ایک گھنائونا کھیل کھیلا جا رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: -   یومِ شہدا اور دفاعِ وطن
Columns of Ansar Abbasi
انصار عباسی

کس سے منصفی چاہیں

کالم نگار کے مزید کالمز پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

کالم نگار کے نام کے ساتھ ایس ایم ایس اور واٹس ایپ رائے دیں 00923004647998

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں