174

لمبی عمر کے حصول اور جوان محسوس کرنے کے طریقے

صحت مند زندگی اللہ تبارک و تعالی کا ایک ایسا تحفہ ہے جس کا جتنا شکر ادا کیا جائے کم ہے۔موت تو برحق ہے مگر جب تک زندگی ہے اسے اچھے طریقے سے جیا جا سکتاہے  اور اس کےلیے یہ معلوم کرنا کہ  ہم صحت مند رہنے  ، جوان ہونے  اور پوری زندگی  فعال رہنے کے ساتھ اپنی زندگی کو کیسے  طول دے سکتے ہیں اور عمر بڑھنے کے آثار سے لڑنے کے لئے کیا کر سکتے ہیں ، ہر انسان کی خواہش ہے۔ اسی بات کے پیش نظر، عمر رسیدہ اور لمبی عمر میں ہونیوالی  پریشانیوں کا مطالعہ کرنے والے دنیا کے ماہرین نے کچھ مفید نکات تیار کیے ہیں کہ کیسے جوان رہنے کے ساتھ  لمبی عمر گذارنی ہے ۔

1۔ حرارت کی پابندی: سائنس دانو کے مطابق تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ خوراک اور غذاء ضعیفی کی رفتا ر کو کم کر دیتا ہے۔اپنی خوراک کو 25 فی صد تک کم کرکے ہم بڑھاپے کو دور رکھ سکتے ہیں۔کم کرنے کا مقصد یہ نہیں کہ ہم روز مرہ کے کاموں کے قابل بھی نہ رہیں بلکہ متوازن غذاء لینی ہے جیسے کہ ضروری امینو ایسڈز،فیٹی ایسڈز، وٹامنز اور منرلز وغیرہ۔یہ مقصد آپ اپنی زمین میں اگائی سبزیاں اور پھل سے پورا کر سکتے ہیں اگر آپ کے پاس اگانے کے لیے زمین ہو تو۔ اس طریقہ کو “حرارت کی پابندی ” کہا جاتا ہے کہ جتنے حراروں کی ضرورت ہو اتنی خوراک کھانی چاہیے ۔

Diet

ایسی خوراک سے مکمل اجتنا ب کرنا چاہیے جس میں مصنوعی مکھن یا تیل  یا چربی شامل کی جاتی ہے۔ بازاروں میں ملنے والی بہت سی مصنوعات ایسی ہیں جو صحت کے اصولوں پر پوری نہیں اترتیں اور ہم ان کے لیبل پڑھنے کی بھی زحمت نہیں کرتے کہ کیسے تیار ہوئی ہیں۔ ان مصنوعات میں ٹرانس فیٹی ایسڈز شامل کیے جاتے ہیں جو کہ صحت کے لیے خطرناک ہیں اور یہ تیل بناتے وقت ہائیڈروجنیٹڈ تیل ہوتا ہے جو کہ کچھ گاڑھا ہوتا ہے اور اسے سینڈوچ میں بطور مکھن استعمال کرنے کے ساتھ گوشت اور ڈیری  پروڈکٹس میں استعمال کیا جاتا ہے۔تلے ہوئے کھانے  سےپرہیز کریں اور دوسرے طریقے سے پکا کھانا استعمال کریں جیسے بیکنک، گرلنگ،سٹیوونگ ، بوائلر وغیرہ۔شوگر کے مشروبات اور جوس ، فاسٹ فوڈ ، اور ریستوراں کے کھانے سے گریز کریں-

ہر دن کم از کم 500 گرام سبزیاں (آلو کو چھوڑ کر) ، سلاد کی صورت میں کھائیں۔ میٹھے کے لیے، بہترین چیز بہت میٹھے پھل نہیں بلکہ تازہ پھل ہیں۔ ان میں حیاتیاتی لحاظ سے فعال مادہ ، وٹامنز ، معدنیات ، اور غذائی ریشہ موجود ہوتا ہے۔ مؤخر الذکر اچھے ہاضمے اور آنتوں کے مائکرو فلورا کی صحت کی ضمانت ہے۔ ایک ہی وقت میں ، اضافی فروکٹوز سے بچیں کیونکہ یہ میٹابولک سنڈروم کو بھڑکاتا ہے۔ہفتے میں تین بار فیٹی مچھلی ، گری دار میوے ، بیج (کدو ، تل اور لیلن) ، زیتون اور فلیکسیڈ کا تیل ، مشروم ، ڈارک چاکلیٹ ، سمندری غذا کھانے کی کوشش کریں۔بورواٹ ، ڈورم گندم ، گندم کی سیریلز کی بجائے اعلی گلیسیمیک انڈیکس  جیسے سفید چاول ، آلو کے قتلے ، یا  ابلے ہوئے آلو سے گارنش کریں۔زیادہ تر وٹامنز سے بھرپور غذاء کھائیں جن کی کچھ مثالیں یہ ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: -   بہت شدید ہیں میرے وجود کے زخم

1۔- بی 6:  (پھلیاں ، اخروٹ ، بیر ،بڑا گوشت)

2۔ بی 12 : (سمندری مچھلی، فارمی مچھلی،بڑا گوشت)

3۔ وٹامن کے: (پالک، پھول گوبھی، بند گوبھی ، کھیرا)

4۔ وٹامن ڈی 3: (انڈے کی زردی، مچھلی کا تیل،کاڈ لیور آئل)

5۔ فولک ایسڈ: (بند گوبھی، پالک اور ترش پھل)

6۔ اومیگا 3: (خار ماہی، سرمئی مچھلی،فلیکسیڈ آئل)

 7۔ کیلشیم: ( دودھ، پنیر اور پھل )

8۔ میگنیشیم: (اخروٹ، پینٹھے کا بیج، تل،میتھی،دلیہ)

9۔ زنک: (میتھی، مٹر، پھلیاں، مونگ پھلی،، پینٹھے کا بیج، تل)

10۔ سلینیم: (گری،لہسن،مکئی،کھمبیاں)

11۔ آیوڈین: (سمندری گھاس، کاڈ لیور آئل، پولاک، مچھلی)

Feeling Young

تحقیق کے مطابق یہ تمام وہ اشیاء ضروریہ ہیں جو جسم کو جلدی بوڑھا ہونے سے روکنے میں مدد گار ہوتی ہیں۔سب سے بہترین طریقہ قدرتی غذاء سے ان سب چیزوں کی مقدار پوری کرنا ہے مگر بعض لوگ مصنوعی وٹامنز کی گولیاں ، ٹیکے یا کیپسول استعمال کرتے ہیں جو کہ بہت خطرناک ہے کیونکہ ان کی مقدار کم یا زیادہ نقصان دے سکتی ہے جبکہ قدرتی اشیاء اس خطرہ سے مبراء ہیں اگر متوزن استعمل کیا جائے تو۔دن میں تین مرتبہ قہوہ پیینے سے کینسر جیسے موذی مرض سے بچا جا سکتاہے اور وقفہ وقفہ سے اپنی شوگر، وزن، کولسٹرول اور ٹرائ گلیسرائیڈز چیک کرا لینے چاہییں۔

2۔ روزہ رکھنا:یونیورسٹی آف جنوبی کیلیفورنیہ کے سائنس دانوں کی تحقیق کے مطابق ماہانہ پانچ مرتبہ روزہ رکھنے  یا بھوکہ رہنے سے 50فی صد کیلوری کم ہوتی ہے جس سے میٹابولزم میں دشواری  کا امکان کم ہو جاتا ہے۔ہم مسلمانوں کے لیے تو اللہ تبارک واتعالی نے پورا ایک مہینہ روزوں کا رکھا تاکہ صحت بہتر کرنے کے ساتھ ساتھ مکمل کردار سازی بھی ہو سکے اور زندگی میں نظم و ضبط کی پابندی کی عادت بھی بن جائے اور ہم ہیں کہ روزہ نہ رکھنے کے بہانے ڈھونڈتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: -   وسیم خان کی وکٹ بھی گر گئی

islam

3۔رات کی نیند:محقیقین کے مطابق بڑھاپہ دور رکھنے کے لیے رات کو اپنی نیند پوری کرنا نہایت ضروری ہے۔ ماہرین کے مطابق رات کو بارہ بجے سے پہلے سونا بہت ضروری ہے کیونکہ یہی وہ وقت ہوتا ہے جب نیند کا ہارمون میلاٹونن پیدا ہوتاہے جس کے شرط نیند اور مکمل اندھیرا ہونا ہے۔زیادہ تر مطالعے سے پتہ چلتا ہے کہ روزانہ کم از کم 7.5 گھنٹے سونا بہت ضروری ہے۔ آرتھوپیڈک تکیہ رکھنا ضروری ہے۔ اسی طرح پیٹھ کی بجائے سائیڈ پر بہتر نیند آتی ہے۔ چونکہ ہم سبھی تیز روشنی ،آلودگی (اسٹریٹ لائٹس ، پڑوسیوں کی کھڑکیوں میں روشنیاں ، روشن اشتہارات) کے تحت رہتے ہیں ، اندھیرے میں سونے کے لئے رات کو گھنے پردے والی کھڑکیوں کو بند کرنا چاہئے ۔ سونے کے وقت سے کم از کم 30 منٹ پہلے ٹی وی ، کمپیوٹر پر بیٹھنے کی کوشش نہ کریں۔ اسکرین گیجٹ سے مصنوعی روشنی میلوٹنن پروڈکشن کے آغاز میں تاخیر کرتی ہے۔ رات کے وقت سونے کے کمرے میں برقی آلات بند کردیں ۔

Night Sleep

4۔ جسمانی و ذہنی ورزش:ورزش آپ کو ہمیشہ تازہ دم اور جوان رہنے جیسے احساس سے بھرپور رکھتی ہے۔ روزانہ کم از کم دس ہزار قدم چلنے کا ارادہ  کرلیں۔اس سے آپ کی ٹانگوں میں خون کی گردش بہترین رہے گی، وزن آپ کے کنٹرول میں رہے گا اور مناسب مقدار میں انسولین کی پیداوار ہوگی جو آپ کو شوگر جیسے مرض سے بچا کر رکھنے میں مدد دیتی ہے۔

excercise

اسی طرح اپنے ذہن کو بھی کام کرتے رہنے کی عادت ڈالیں، اپنے دوستوں سے بات چیت کیا کریں، اپنے گھر والوں سے باتیں کریں، مشکل پذلز حل کرنے کی کوشش کریں، پہیلیاں حل کریں،دوسری زبانیں اور نئی چیز سیکھنے کی کوشش کریں اس سے ذہنی فعل کی خرابی دور ہو جائے گی اور آپ کے علم میں اضافہ بھی ہو گا۔اچھا لگنے کی کوشش کریں۔ اس سے اعتماد ، ایک احساس ملتا ہے کہ آپ اتنے ہی بوڑھے ہیں جتنا نظر آتے ہیں۔ مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ اس طرح کا احساس زندگی کے عملوں کے نیوروینڈوکرائن ریگولیشن کو تیز کرتا ہے اور عمر بڑھنے کو کم کرتا ہے۔ باقاعدگی سے سفر کریں – قدرتی جگہوں  میں پکنک ، دوسرے شہروں میں  سیر و تفریح ​​کرتے رہیں ، کھلی ہوا میں چلیں۔ افسردہ خیالات اور چڑچڑاپن سے بچیں؛ اپنے دباؤ کو سنبھالنا سیکھیں۔ طویل یا شدید تناؤ عمر بڑھنے کو تیز کرتا ہے، اس کے برعکس ذہنی دباو میں اعتدال اس عمل کو سست کرتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: -   پاکستان نے تیسرے ٹی ٹوئنٹی میں جنوبی افریقا کو آؤٹ کلاس کردیا

Brain Games

5۔ بری عادتیں چھوڑ دیں:سب سے آخری ایسی عادتوں سے چھٹکارہ پائیں جو آپ کی صحت پر برا اثر ڈالتی ہیں جیسے صرف سگریٹ نوشی سے پرہیز آپ کی زندگی کے نو سال بڑھا سکتا ہے اسی طرح اگر آپ شراب پینا چھوڑ دیں تو تقریبا آٹھ سال اپنی زندگی میں اضافہ کر سکتے ہیں۔وقفہ وقفہ سے اپنا طبی معائنہ کراتے رہیں تاکہ عمر بڑھنے کے ساتھ آنیوالی بیماریوں کو کنٹرول کیا جا سکے جیسے شوگر، کینسر، جوڑوں کا درد، بلڈ پریشر اور دل کی بیماریاں وغیرہ۔جب تک نہایت ضروری نہ ہو اس وقت تک سٹیرائیڈز کا استعمال مت کریں  جیسے ہمارے ہاں موٹا ہونے کے لیے ادویات لی جاتی ہیں ان میں یہی  دوا شامل کی جاتی ہے اور دعوی کیا جاتاہے ان سے پاک ہونے کا ، تو ان ادویات سے بچیں اور کسی بھی دوائی کے استعمال سے پہلے ڈاکٹر سے مشورہ  ضرور کر لیاکریں۔

no-drugs

یہ وہ چند ایک باتیں ہیں جن پر عمل کر کے آپ نہ صرف یہ کہ اپنی صحت بہتر کر سکتے ہیں بلکہ عمر بڑھنے کے ساتھ ساتھ اپنے آپ کو فٹ بھی رکھ سکتے ہیں ۔تو عمل کریے اور اپنی عبادات کو مزید نکھاریے اور مجھے اپنی دعاوں میں ضرور یاد رکھیے گا۔

اردو ہماری اپنی اور پیاری زبان ہے اس کی قدر کیجیے۔
سوچ کو الفاظ کے موتیوں میں پرو کر دوسروں تک پہنچانا ہی میرا مقصد ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں